Tuesday, January 6, 2009

کبوتروں کی بھی کیا زندگی ہوتی ہے

سردیوں کی نرم مزاج دھوپ میں چھت پر ٹہلتے ہوئے اچانک پروں‌کی پھڑ‌پھڑاہٹ نے اپنی طرف متوجہ کیا۔۔۔پلٹ کر دیکھاتو خوبصورت دھلے ہوئے آسمان پر کبوتر اڑان بھر رہے تھے۔۔۔۔ایک لمحےکو ان کی اڑان پر بڑا رشک آیا۔۔۔مگر اگلے ہی لمحے نظران کے پنجرے پر پڑی۔۔۔۔بھلا ان کبوتروں کی بھی کیا زندگی ہوتی ہے۔۔۔مالک نے اپنی قید میں لیتے ہی پر کاٹ دیے۔۔۔پھر دانے دنکے کا محتاج بنادیا۔۔۔۔۔
ایک عرصہ اپنی قید سے مانوسیت کا یقین ہوجانے کے بعد۔۔۔۔۔۔۔جو آزادی دی وہ پھرآزادی ہی نہ رہی۔۔۔۔۔۔پلٹ کر اسی قید میں آجانے کا گہرا خیال ننھے دماغوں پر نقش ہوچکا۔۔۔۔۔بار بار پر کاٹ ڈالنے کا عمل۔۔۔۔
پھر بلی کو دیکھ کر کبوتروں کا آنکھیں‌ بند کرلینا بھی ذہن میں آنے لگا۔۔۔۔۔یہ بھی مالک کی مرضی ہی ٹہری کہ وہ پنجرہ کیسا بناتا ہے۔۔۔اگر پنجرہ مضبوط ۔۔۔تو بلی سے بچت۔۔۔اور اگر پنجرہ کمزور رکھا گیا تو پھر کبوتر تو سوائے آنکھیں بند کرلینے کے اور کچھ کر بھی نہیں سکتے۔۔۔۔۔۔۔
یک دم ہی ان کی وقتی آزادی بے معنی لگنے لگی۔۔۔ان کی اس کھوکھلی اڑان سے خوف آنے لگا۔۔۔۔ان کے شکستہ حال پنجرے کو دیکھ کر ان پر ترس آنے لگا۔۔۔۔
کبوتروں کا پنجرہ۔۔۔۔۔ان کی قید۔۔۔۔۔۔ انکا قید سے لگاو۔۔۔اوران کا طرز زندگی۔۔۔کسی قوم سے مشابہ لگا۔۔۔۔۔۔۔مگر کس سے۔۔۔۔۔۔۔۔۔ باوجود کوشش کے یہ یاد نہ آسکا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

9 Comments:

At January 6, 2009 at 3:28 AM , Anonymous ڈفر said...

پاکستان کا حال بھی ایسے ہی کسی کبوتر کی طرح ہے

 
At January 6, 2009 at 5:23 AM , Anonymous بلوُ said...

ڈفر صاحب نے پہلے ہی کہہ دیا ” پاکستان ” اور آپ بھی اب یاد رکھئے گا۔

 
At January 6, 2009 at 5:25 AM , Blogger sarapakistan said...

ہاں‌مگر جب سوچ کے پر کٹے ہوں تو یہ بات بھلا کب دھیان میں‌آتی ہے۔۔۔۔۔۔۔

 
At January 6, 2009 at 7:34 AM , Anonymous Abdul Qudoos said...

ارے یہ تو اپنا ہی کچھ کچھ لگتا ہے

 
At January 7, 2009 at 3:04 AM , Anonymous ڈفر said...

سر جی اپنا کچھ کچھ نہیں اپنے پورے پاکستان کی بات ہو رہی ہے
اب یہ نا کہنا کہ تمہارے گھر پر جو کبوتروں کا ڈربہ ہے تم اس کی بات کر رہے تھے

 
At January 9, 2009 at 7:29 AM , Blogger Duffer said...

why my comments are going for moderation
and why are you not approving those? :(

 
At January 12, 2009 at 2:19 AM , Anonymous ابوشامل said...

بہت خوب سارہ، بہت اچھا لکھا ہے۔ آپ میں چند بلاگرز کی طرح تحریر کے جراثیم بدرجہ اتم پائے جاتے ہیں ورنہ بیشتر بلاگرز تو میری طرح بس صفحے کالے کرتے رہتے ہیں :(

 
At January 12, 2009 at 3:24 AM , Blogger sarapakistan said...

فہد بھائی۔۔بہت شکریہ آپ کی انکساری اور ذرہ نوازی کے سامنے تو میرے الفاظ‌ہی ختم ہوجاتے ہیں۔۔۔۔
آپ کی اس حوصلہ افزائی کا جتنا بھی شکریہ ادا کروں‌کم ہی لگتا ہے۔۔۔۔بہت شکریہ۔۔۔

 
At January 16, 2009 at 3:54 AM , Anonymous ابوشامل said...

ادی اسے انکساری و ذرہ نوازی پر محمول مت کیجیے میں صرف حقیقت بیان کر رہا ہوں۔

 

Post a Comment

Subscribe to Post Comments [Atom]

<< Home